Sunday, March 4, 2012

توحیدی پرچم کس کے سنگ اٹھا رکھا ہے

توحیدی  پرچم  کس  کے  سنگ  اٹھا    رکھا   ہے 
غبار اغیار  میں  الوہی  رنگ  چھپا    رکھا    ہے 

ایک ھی منزل کے راہی بے خبر ہیں قزاقوں سے 
ناخدا کے  بھیس  میں  قاتل  نہنگ  بٹھا   رکھا ہے 

ابلیس تھا خدا پرست  مگر،  رقیب    آدم     ٹھہرا 
کس کس نے   منکر آدم  کا  کلنک  لگا  رکھا ہے 

کون ہے  مسیحا؟    آج    کے  دور   میں    غافل
ہر  طرف  تو   نقارہ   جنگ   بجا   رکھا     ہے 

اندھے   کو   گڑھے   دھکیلنے    والے ظلام ہیں
طاغوتی زور سے  نہتے کو لنگ  بنا  رکھا  ھے 

دیواروں  پر خالی  نعرے   بے اثر  ہیں    واعظ 
غریبوں کو  تو  بھوک  ننگ  نے   ستا رکھا ہے 

معاشی تفریق بند کرو ،   مفلس  بہک جاتا ھے 
جاہل نے حا جت روائی  کا  ڈھونگ رکھا ھے 

زكاة و سخا وت سے  کرتے ہیں    اغماض بہت 
تعاقب شکارمیں بھی   ناکام  سگ بھگا رکھا ھے 

کوئی مانے یا  نا مانے  ہم بھی  باسی ہیں طالب 
اسی لنے تو کہن  کا   روگ   لگا   رکھا  ھے 
طالب حسسیں گوجرانوالہ پاکستان 

No comments:

Post a Comment