Friday, March 16, 2012

قید خانہ ، قید خانے میں زیب نہیں دیتا - شعلہ ےعشق سرد خانے میں زیب نہیں دیتا

قید خانہ ،   قید خانے  میں  زیب  نہیں  دیتا 
شعلہ ےعشق سرد خانے میں زیب نہیں دیتا 

کشش  سے  ناچتا  ہے،  سمندر   میں   پانی 
مد   و جزر   ویرانے  میں  زیب  نہیں  دیتا 

موجوں میں تلاطم کیوں، بے ہنگم ہواؤں سے 
ٹھہراؤ  بھی  پیمانے  میں  زیب  نہیں  دیتا 

آلودہ  پانی  سے روئے زیبا  اوجل ہوتا ہے 
جمال مہتاب  پیالے  میں  زیب  نہیں   دیتا 

زارت میں جلوہ افروزی ،   زرہ ہی  مداح 
خاکی  پھر  اترنے  میں  زیب  نہیں   دیتا

بانسری  تو  گا  رہی  فطری  پھونک  سے 
قصہ ے  غیر  پھر  ترانے  زیب نہیں دیتا

کچھ بھی نہیں ہے میرے پاس الفت کے سوا
 پھر چور میرے آشیانے میں زیب نہیں دیتا

جلائی ہے شمع اپنے ہی خوں سے بس کہ 
اندھیرا  بھی  تو  سینے میں زیب نہیں دیتا 

وصید غیر میں نے  دیکھی  نہیں  ہے  کبھی
پھر حکم بیدخلی ،آستانے سے زیب نہیں دیتا

"پیام آنست" بجانب موسیٰ ، حجت   تھا   شجر             (القرآن -٢٠:١٠،١١)
چہرہ ے ناتواں ، اس  آینے میں زیب نہیں دیتا  

"کنکریاں میں نے پھینکی "ہے ازلی خبر طالب                 (القرآن-انفال-٢)
نیست  کسی  بھی  زمانے میں  زیب  نہیں  دیتا 
  
Poetry by Talib Hussain -Gujranwala-Pakistan

No comments:

Post a Comment